تعبیرخواب

سیل(رو)

حضرت ابن سیرین رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ نے فرمایا ہے ۔کہ خواب میں سیل بڑا دشمن ہے یا بادشاہ ظالم ہے ۔ اور اگر خواب میں دیکھے کہ سیل کو اپنے آپ سے دور کیا ہے اور وہ دوسری جگہ جا پڑا ہے ۔ دلیل ہے کہ دشمن پر فتح پائے گا ۔ اور اس کو غم و اندوہ کم ہو گا ۔ اور اگر دیکھے کہ سیل سے بھاگا ہے تو دشمن سے بھاگے گا ۔
حضرت ابراہیم کرمانی رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ نے فرمایا ہے کہ سیل خواب میں سر دسیر دریا سے غم واندوہ ہے اور اگر سیر دریا سے منفعت پر دلیل ہے ۔
حضرت جابر مغربی رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ نے فرمایا ہے۔ اگر جہان کو سیل پر دیکھے اور یہ نہ جانے کہ کہاں سے آیا ہے دلیل ہے کہ حق تعالیٰ اس ملک میں عذاب بھیجے گا ۔ فرمان حق تعالیٰ ہے ۔ فارسلنا علیھم الطوفان(اور ہم نے ان پر طوفان کو بھیجا)
اور بعض اہل تعبیر نے بیان کیا ہے ۔ اگر خواب میں دیکھے کہ سیل جگہ کو خراب کرتا ہے ۔ دلیل ہے کہ اس جگہ کے لوگوں کو بادشاہ سے تاوان کا خوف ہو گا ۔
حضرت جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ خواب میں سیل کا دیکھنا چار وجہ پر ہے ۔ (۱)بڑا دشمن(۲)ظالم بادشاہ (۳)غائب لشکر(۴)بلا اور فتنہ اور سختی ۔