یوگا اور حسُن

یہ مشقین کب اور کیسے کی جائیں

یوگا سیکھنے والے اکثر طلبا،و طالبات یہ سوال کرتی ہیں۔کہ کیا ان مشقوں کا ہر روز کرنا ضروری ہے۔پھر یہ ورزشیں کب تک کرنا ہوں گی۔زیادہ ضروری مشقیں کون سی ہیں اور ایک وقت میں کتنی مشقیں کرنی چاہئیں۔نیز دن کا کون سا حصہ ان کے لئے بہتر رہے گا۔ان سوالوں کا ایک ہی جواب ہے کہ اگر آپ ان مشقوں سے پھرپور فائدہ اٹھانا چاہتے ہیں تو باقاعدگی اختیار کریں اور ہر روز ایک ہی وقت مقررہ پر یوگا کریں۔۔اگر غیرمعلولی مصرفیات کے باعث آپ ایسا نہیں کر سکتے تو کچھ آسن ہفتہ میں کم از کم کئی مرتبہ ضرور دہرائیں۔چند منٹ جسم کو آرام پہنچا کر دماغ اور بدن کو آئندہ کی جانے والی مشقوں کے لئے تیار کریں۔ابتدا ء میں گردن اور آنکھوں کی آسان ورزشیں کریں پ پھر بدن کے جوڑوں میں لچک پیدا کرنے والی بازوؤں اور ٹانگوں کی آسان مشقیں کریں۔سانس ہمیشہ ناک سے لیں۔اگر شروع میں ساری مشقیں پوری طرح یا د نہ رہیں تو گھبرانے کی کوئی ضرورت نہیں جو مشقیں دو اطراف یا دو بازوؤں یا ٹانگوں سے متعلق ہیں،وہ دونوں اطراف سے ہونی چاہیں ورنہ ترقی کی رفتار درست نہیں رہے گی۔اگر الواقعہ وقت کا ملنا مشکل ہے تو پھر آسنوں کا چناؤ اپنی ضرورت کو مدنظر رکھ کر کریں۔سر کے بل کھڑے ہونے والی ورزشوں ے پہلے آپ ڈاکٹر سے مشورہ کر لیں کہ ٓاپ کو ہائی بلدپریشر یا اس نوعیت کی کوئی دوسری تکلیف تو نہیں جو کسی نقصان کا باعث بن سکتی ہے۔ اس میں کوئی شعبہ نہیں کہ ان آسنوں سے سانس میں بہتری پیدا ہوتی ہے۔خون کی گردش درست ہے لیکن مذکورہ بالا مخصوص ورزشوں سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ کر لینا مناسب ہے۔