تعبیرخواب

شیر

حضرت ابن سیرین رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ نے فرمایا ہے کہ میں شیر دشمن ہے اگر دیکھے کہ شیر کے ساتھ جنگ کی ہے ۔ دلیل ہے کہ شمن سے جھگڑا کرے گا ۔ اور جس کو فتح ہو گی وہی غالب ہو گا۔
اور اگر دیکھے کہ شیر کے نشان پر گیا ہے دلیل ہے کہ بادشاہ سے ڈرے گا ۔ اور اگر دیکھے کہ شیر سے بھاگا ہے اور شیر اس کو تلاش کر تا ہے دلیل ہے کہ جس سے ڈرتا ہیے اس سے امن میں ہو گا ۔
اور اگر دیکھے کہ شیر کا گوشت کھاتا ہے ۔ دلیل ہے کہ بادشاہ ہوں سے مال حاصل کرے گا اور دشمن پر فتح پائے گا۔ اور شیر کا گوشت کھانا بادشاہ سے خلعت پانا ہے ۔
حضرت ابراہیم کرمانی رحمتہ اللہ تعالی علیہ نے فرمایا ہے کہ میں شیر بادشاہ ہے ۔ اور اگر دیکھے کہ شیر کے جسم سے کوئی چیز پکائی ہے یا اس کو کسی نے دی ہے اور اس نے کھائی ہے ۔ دلیل ہے کہ دشمن کے مال سے کچھ کھائے گا۔ اور اگر دیکھے کہ اس نے شیر سے جماع کیا ہے دلیل ہے کہ بری عادتوں سے نجات پائے گا۔ اور مراد کو پہنچے گا ۔ اور اگر دیکھے کہ اس نے شیر کو بغل میں پکڑا ہے ۔ دلیل ہے کہ دشمن سے صلح کرے گا۔
اور اگر دیکھے کہ نرشیر اس سے جماع کرتا ہے دلیل ہے کہ باشادہ سے زلت دیکھے گا۔ اور اگر دیکھے کہ شیر اس کے پیچھے سے آکر آگے سے نکل گیا ہے ۔ دلیل ہے کہ اس کو بادشاہ سے نقصان پہنچے گا۔
حضرت دانیال علیہ السلام نے فرمایا ہے ۔ اگر میں دیکھے کہ اس نے شیر کا دودھ پیا ہے دلیل ہے کہ بادشاہی پائے گا۔ اور اگر دیکھے کہ بادشاہ نے اس کو شیر دیا ہے ۔ دلیل ہے کہ اس کو بادشاہی دے گا یا اپنی ملک میں سے کوئی ولایت دے گا ۔ اور اگر دیکھے کہ شیر کے سر پر بیٹھا ہے ۔ دلیل ہے کہ اس کی دولت اور مرتبہ زیادہ ہو گا۔
حضرت جابر مغربی رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ نے فرمایا ہے کہ میں نرشیر بادشاہ ہے ۔ اور میں شیر ملکہ ہے ۔ اور اگردیکھے کہ شیرنی کا دودھ نکالا ہے ۔ دلیل ہے کہ بادشاہ کا منشی ہو گا۔ اور اگر بڑھیا عورت یہی دیکھے تو بادشاہ کے فرزند کی دایہ ہو گی ۔ اور اگر دیکھے کہ شیر کو پشت سے پکڑا ہوا ہے ۔ دلیل ہے کہ دشمن اس پر فتح پائے گا۔ اور اگر دیکھے کہ شیر نے اس کو کاٹا ہے دلیل ہے کہ دشمن سے نقصان اٹھائے گا۔
حضرت اسماعیل اثعث رحمتہ اللہ تعالیٰ علیہ نے فرمایا ہے ۔ اگر دیکھے کہ شیر نے اس کو بغل میں پکڑا ہوا ہے ۔ دلیل ہے کہ بادشاہ کا مقرب ہو گا ۔ا ور اگر اس کے خلاف دیکھے تو بادشاہ کے غصہ پر دلیل ہے ۔
اور اگر دیکھے کہ اس نے شیر کے ساتھ کھانا کھایا ہے ۔ دلیل ہے کہ بادشاہ کا معتمد ہو گا ۔ لیکن میں شیر کا چمڑا اور گوشت اور ہڈی وغیرہ دشمن پر دلیل ہے ۔
اور اگر دیکھے کہ شیر کا گوشت کھایا ہے ۔ دلیل ہے کہ دشمن کو آسانی سے قابو میں لائے گا۔ اور اگر اس کے خلاف دیکھے تو تاویل بھی خلاف ہے ۔
حضرت جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ میں شیر کا دیکھنا تین وجہ پر ہے ۔ (۱)بادشاہ(۲)مرددلیر (۳)زبردست دشمن ۔